چلی میں طلبا کا تعلیمی اصلاحات پر عمل درآمد نہ ہونے کے خلاف احتجاج

208 تعبيرية جمعرات 12 مئی‬‮ 6102 - (صبح 9 بجکر 2 منٹ)

شیئر کریں:

چلی میں طلبا کا تعلیمی اصلاحات پر عمل درآمد نہ ہونے کے خلاف احتجاج سان تیاگو: چلی کے دارالحکومت سان تیاگو میں حکومت کی جانب سے تعلیمی اصلاحات پر عمل درآمد نہ ہونے پر طلباء تنظیموں کی جانب سے شدید احتجاج کیاگیا. تفصیلات کےمطابق طلبا تنظمیوں نے بدھ کے روز چلی کے دارالحکومت سان تیاگو میں صدر کی جانب سے تعلیمی اصلاحات پر عمل درآمد نہ ہونے پر احتجاج کیا، صدر نے غریب طلباء کے لیے مراعات، نئے اسکول اور ہر طالب علم کے لیے یونیورسٹی سطح کی تعلیم مفت کرنے کا وعدہ کیا تھا. چلی کی طلباء تنظمیوں کےاحتجاج کےدوران میٹرواسٹیشن عارضی طور پر بند کردیا گیا، ناخوش طلباکومنتشرکرنےکیلئے پولیس نے آنسوگیس اور واٹر کینن کا استعمال کیا، پولیس نےمتعدد طلباء کو احتجاج کرنے کے باعث گرفتار کرلیا. گذشتہ سال کانگریس نے تعلیمی اصلاحات کی پہلی سیریز کی منظوری دے دی تھی اور سرکاری اسکولوں کی منتخب داخلوں کی پالیسیوں کو ہٹا دیا تھا. مظاہرین کا کہنا تھا کہ حکومت کی جانب سے متعارف کی گئی اصلاحات کافی نہیں ہیں، حکومت تمام طالب علموں کو اعلیٰ تعلیم مفت فراہم کرے. یاد رہے طلباء کی جانب سے چلی کے تعلیمی نظام کو تبدیل کرنے کے لیے 2011 سے اب تک سینکڑوں احتجاج کئے گئے ہیں، ان مظاہروں میں کئی طلبا جان کی بازی ہار چکے ہیں.